اعتبار ساجد

معروف شعرا کی شہرت کی ایک بڑی وجہ ان کے کسی نہ کسی شعری مجموعے کی بے پناہ شہرت بھی ھوتی ھے۔ مثلاً پروین شاکر کی خوشبو وصی شاہ کی آنکھیں بھیگ جاتی ہیں۔۔ اعتبار ساجد بھی ایسے ہی معروف شعرا کی صف میں آتے ہیں۔ ان کا ایک شعری مجموعہ “مجھے کوئی شام ادھار دو” اپنے وقت کی مقبول ترین کتاب تھی۔ اس کے درجنوں ایڈیشن فروخت ھوۓ۔ اعتبار ساجد بیس سے زیادہ کتابوں کے خالق ہیں۔ علاوہ ازیں طنزومزاح کے میدان میں بھی اعتبار ساجد بھر پور حصہ رکھتے ہیں۔ اور ان کی درجنوں کتابیں مثلاً لگ پتہ جاۓ گا، جا بیل اسے مار،ہاؤس فل، واہ بھئی واہ، یہ عالم شوق کا وغیرہ شامل ہیں۔ بچوں کے لیے کئی ناول لکھے جن میں راجو کی سرگزشت اور آدم پورکا راجہ کو پڑھنے والوں میں بھر پورپزیرائی ملی۔۔۔۔۔ پزیرائی نام کا ایک شعری مجموعہ بھی ہے۔ جو 1989 میں چھپا اور انعام یافتہ قرار پایا۔ ۔ علم عروض پر مشتمل کتاب شاعری کیسے کریں بھی اعتبار ساجد کی تالیف ھے۔ ان کے علاوہ ٹی وی ڈرامہ ناول انٹرویوز اور سفر نامہ پر بھی اعتبار ساجد نے طبع آزمائی کی اور تقریباً ہر شعبہ ادب میں کامیاب رہے۔ اعتبار ساجد اعلیٰ تعلیم یافتہ اور لیکچرر ہیں کافی عرصہ اسلام آباد کے کالجز میں پڑھانے کے بعد آج کل لاہور میں سکونت پزیر ہیں۔ بلاشبہ اعتبار ساجد اردو ادب میں نمایاں نام ہے۔