ایچ اقبال

الف لیلیٰ

ڈائجسٹوں کے پرانے قارئین الف لیلیٰ ڈائجسٹ نہ بھولے ہوں گے۔پچھلی صدی کے آٹھویں نویں عشرے میں الف لیلیٰ ڈائجسٹ کا طوطی بولتا تھا اس کے روح رواں ایچ اقبال تھے ایچ اقبال کاپورا نام ہمایوں اقبال ہے قلم کی دنیا میں اپنا ثانی نہیں رکھتے الف لیلی ڈائجسٹ میں چھپنے والی اپنے وقت کی مقبول ترین کہانی چھلاوہ کو کون بھول سکتا ہے یہ تین مختلف ناموں سے لکھتے تھے ایچ اقبال، ہمایوں اقبال اور ہمایوں بلگرامی اور کچھ لوگوں کا کہنا یہ بھی ہے کہ چھلاوہ بھی انھوں نے ہی لکھی ہےسیکڑوں کے حساب سے عمران سیریز بھی ان کے کریڈیٹ پر ہیں۔ ایک اور ماہ نامہ نئی نسلیں بھی انھوں نے شروع کیا تھاجس کی اٹھان بہت خوب تھی ڈائجسٹ سے بڑے سائز کا یہ ماہ نامہ اپنے مواد کے حساب سے ڈائجسٹ ہی تھا اس کے غالباً تین یا چار شمارے شائع ہوئے تھے پھر بوجوہ بند ہو گیا۔ موسیقی سے بھی ان کو خاص لگاؤ اور رغبت تھی مہدی حسن صاحب کی شاگردی بھی اختیار کی۔اب بھی گا ہے بگا ہے۔۔۔ ڈائجسٹوں میں ان کی کہانیاں پڑھنے کو ملتی ہیں